مرکزي کالم

شیخ مقصود الحسن فيضي

رمضان المبارک

المقال

  ...  

رب سے سات سوال/حديث:33
984 زائر
08/11/2013
شيخ ابو کليم فيضي حفظہ اللہ

بسم اللہ الرحمن الرحيم

حديث نمبر :33

خلاصہء درس : شيخ ابوکليم فيضي حفظہ اللہ

بتاريخ :13/14/ ذوالحجہ 1428 ھ، م 22/21، جنوري 2008م

رب سے سات سوال


عن أبي ھريرة عن رسول اللہ صلي اللہ عليہ وسلم قال : '' سأل موسي ربہ عن ست خصال ، کان يظن أنھا لہ خالصة ، والسابعة لم يکن موسي يحبھا :

1۔ قال يا رب ! أي عبا دک أتقي ؟ قا ل : الذي يذکر ولا ينسي .

2۔ قال :فأي عبادک أھدي ؟ قال : الذي يتبع الھدي .

3۔ قال : فأي عبادک أحکم ؟ قال : الذي يحکم للناس کما يحکم لنفسہ .

4۔ قال :فأي عبادک أعلم ؟قال :الذي لا يشبع من العلم ، يجمع علم الناس لي علمہ .

5۔ قال : فأي عبادک أعز ؟ قال : الذي ذا قدر غفر .

6۔ قال : فأي عبادک أغني ؟ قال : الذي يرضي بما يؤتي .

7۔ قال : فأي عبادک أفقر ؟ قال صاحب منقوص .

قال رسول اللہ صلي اللہ عليہ وسلم : ليس الغني عن ظھر ، نما الغني غني النفس ، وذا أراد اللہ بعبد خيرا ، جعل غناہ في نفسہ ، وتقاہ في قلبہ ، وذا أراد اللہ بعبد شرا جعل فقرہ بين عينہ '' .

( الصحيحہ : 3350 )

ترجمہ : حضرت موسي عليہ السلام نے اپنے رب سے چھ باتوں کے متعلق سوال کيا ، حضرت موسي عليہ السلام کا خيال تھا کہ يہ چھ باتيں انہيں کے ساتھ خاص ہيں ، اور ايک ساتويں بات سے متعلق بھي سوال کيا جسے وہ نا پسند کرتے تھے:

1۔ عرض کيا : اے رب ! تيرا کونسا بندہ سب سے زيادہ پرہيز گار ہے ؟ اللہ تعالي نے جواب ديا : جو ( اللہ کو ) ياد رکھتا ہے اور کبھي نہيں بھولتا .

2۔ عرض کيا : تو تيرا سب سے ہدايت يافتہ بندہ کون ہے ؟ اللہ تعالي نے جواب ديا : جو ہدايت کي پيروي کرتا ہے .

3۔ عرض کيا : تو تيرا کونسا بندہ سب سے بہتر فيصلہ کرنے والا ہے ؟ اللہ تعالي نے جواب ديا : وہ بندہ جو لوگوں کے بارے ميں جيسا فيصلہ کرتا ہے ويسا ہي اپنے نفس کے بارے ميں بھي کرتا ہے .

4۔ عرض کيا تو تيرا کونسا بندہ سب سے بڑا عالم ہے ؟ اللہ تعالي نے جواب ديا : جو علم سے آسودہ نہيں ہوتا خواہ تمام لوگوں کا علم اکٹھا کرلے .

5۔ عرض کيا : تو تيرا کونسا بندہ سب سے عزت والا ہے ؟ اللہ تعالي نے جوا ب ديا : جو بدلہ لينے پر قدرت کے باوجود معاف کردے .

6۔ عرض کيا : تو تيرا کونسا بندہ سب سے زيادہ غني ہے ؟ اللہ تعالي نے جوا ب ديا : جسے جو کچھ مل جائے اس پر راضي ہو .

7۔ عرض کيا : تو تيرا کونسا بندہ سب سے زيادہ فقير ہے ؟ اللہ تعالي نے جواب ديا : جسے جتنا بھي مل جائے اسے کم سمجھے .

اللہ کے رسول صلي اللہ عليہ وسلم نے ارشاد فرمايا : مالداري مال کي کثرت نہيں ہے ، اصل مالداري نفس کي مالداري ہے ، اور اللہ تعالي جب کسي بندے کے ساتھ خير کا ارادہ رکھتا ہے تو مالداري اسکے نفس ميں رکھ ديتا ہے اورتقوي اسکے دل ميں جانگزيں کرديتا ہے اور جب کسي بندے کے ساتھ شَرْ کا ارادہ فرماتاہے تو فقر اسکے سامنے کرديتا ہے .

فوائد :

1۔ تمام نبيوں کا دين ايک ہے .

موسي عليہ السلام کي فضيلت اور اللہ کا قرب حاصل کرنے کي انکي خواہش .

3۔ علم ، تقوي ، قناعت وغيرہ کي فضيلت .

4۔ بخل ، حرص ، جہل اور غفلت کي مذمت .

5۔ ذکر الہي ميں مشغول رہنے کي فضيلت .

6۔ ايک مسلمان بھائي کي اہميت .

7۔ گذرے ہوئے تمام انبياء عليہم السلا پر ايمان ضروري ہے .

8۔ عفو ودرگذر کي فضيلت کہ وہ انسان کو اعلي مقام پر فائز کرتي ہے .

ختم شدہ

   طباعة 
1 صوت
...
...

...

جديد المقالات

  ...  

عام دروس - خلاصۂ دروس
اصول خرید وفروخت/حدیث:244 - ہفتہ واری دروس word
حقیقی چار میم /حدیث:243 - ہفتہ واری دروس word
احسان بنام حیوان/حدیث:242 - ہفتہ واری دروس word
حلال و حرام جانور/حدیث:241 - ہفتہ واری دروس word
...
...

...

مكتب توعية الجاليات الغاط ?