مرکزي کالم

شیخ مقصود الحسن فيضي

رمضان المبارک

المادة

  ...  

مومن کا موسم بہار / /حدیث:151
862 زائر
14/01/2011
شیخ ابوکلیم فیضی حفظہ اللہ

بسم اللہ الرحمن الرحیم

حديث نمبر : 151

خلاصہء درس : شیخ ابوکلیم فیضی الغاط

بتاریخ : 06/07/محرم 1432 ھ، م 11/10 جنوري2011

مومن کا موسم بہار

عن عامر بن مسعود رضي الله عنه أن النبي صلى الله عليه و سلم قال: الغنيمة الباردة الصوم في الشتاء .

{سنن الترمذی :796 الصوم ،مسند احمد :4 /335، صحیح ابن خزیمۃ :2145 الصوم }

ترجمہ : حضرت عامر بن مسعود رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا :غنیمت باردۃ موسم سرما میں روزہ رکھنا ہے ۔ {سنن الترمذی ، صحیح ابن خزیمہ ، مسند احمد }

تشریح : سردی وگرمی اللہ تعالی کی مخلوق اور اسکے تابع فرمان ہیں ، اللہ تعالی نے اپنی حکمت بالغہ اور قدرت کاملہ سے موسم کو سردی وگرمی میں تقسیم کیا ہے جسمیں بنی نوع انسان اور دیگر مخلوقات کیلئے بڑافائدہ ہے ۔اگر سال بھر سردی ہی سردی رہے تو مادوں میں تخثر وجمود پیدا ہو جائے اور اعمال معطل ہو جائیں اور اگر سال بھر گرمی ہی گرمی رہے تو مادوں میں فساد و اضمحلال پیدا ہو جائے اور اعمال معطل ہو جائیں ، اسکے علا وہ اور بھی بے شمار فائدے سرمی وگرمی کی آمد میں ہیں ۔لیکن ایک مومن کیلئے سب سے اہم فائدہ یہ ہے کہ وہ بہت سے نیک اعمال جو گرمی میں نہیں کرپاتا انہیں سردی میں انجام دے لیتا ہے اور بعض وہ اعمال خیر جو سردی میں نہیں کرپاتا انھیں گرمی میں انجام دے لیتا ہے ،علی سبیل المثال ۔

[۱] روزہ بڑی اہم عبادت اور بہت بڑے اجر کا کام ہے ، روزہ جہنم کی آگ سے ڈھال اور حشر کے میدان میں پیاس سے امان ہے ،روزہ رحمان کو محبوب اور روزہ دار اپنے رب کا مقرب بندہ ہے ، لیکن گرمی کے موسم میں چونکہ دن بڑا اور گرم ہوتا ہے لہذا بہت سے لوگ خصوصا مشقت کا کام کرنے والے خواہش کے باوجود روزہ نہیں رکھ پاتے ، ایسے لوگوں کیلئے سردی کا موسم غنیمت اور روزہ کیلئے بہت ہی موزوں ہے ، جیسا کہ زیر بحث حدیث میں اسے غنیمت باردہ سے تعبیر کیا گیا ہے ، غنیمت کہتے ہیں اس مال کو جوجہاد میں قتال کے بعد دشمنوں سے چھینا جائے اور باردہ کے معنی سرد کے ہیں یعنی وہ چیز آسانی ، نرمی اور بلا مشقت حاصل ہو ،گویا غنیمت باردہ ایسا مال ہے جو بلا کسی مشقت وپریشانی اور جان کو خطرہ میں ڈالے بہت ہی آسانی سے ہاتھ آجائے ، مقصد یہ ہے کہ سردی کے موسم میں چونکہ دن طویل نہیں ہوتا اور نہ ہی موسم گرم ہوتا ہے کہ پھوک وپیاس کا احساس ہو لہذا روزہ رکھنے میں کوئی مشقت و پریشانی نہیں اٹھانی پڑتی اور روزےکا عظیم اجربہت ہی آسانی سے حاصل ہو جاتا ہے لہذا وہ غنیمت باردہ ہے ، بلکہ زیر بحث حدیث میں اسے اصل غنیمت کہا گیا کیونکہ وہ مال غنیمت جو مال ومتاع کی شکل میں حاصل ہو اسی دنیا میں فنا ہو جائے گا جبکہ روزے کا اجر باقی رہنے والا اور آخرت میں کام آئے گا ۔

[۲] قیام اللیل یعنی تہجد کی نماز فرائض کے بعد سب سے افضل نماز ہے ، اللہ کے مقرب بندوں شیوہ اور رب رحیم کے تقرب کا بہترین ذریعہ ہے ، گناہوں کا کفارہ اور رب کریم کی نافرمانیوں میں رکا وٹ ہے بلکہ اس میں انسانی جسم کی صحت کا راز بھی پوشیدہ ہے ، لیکن گرمی کے موسم میں جب گر می کی وجہ سے جسمانی نشاط کم اور نید کا غلبہ رہتا ہے ، اس پر مزید یہ کہ رات کے چھوٹی ہو نے کے ساتھ ساتھ گرمی کی شدت کی وجہ سے سکون کی نید نہیں مل پاتی ایسے وقت میں تہجد کی نماز تو دور بلکہ فجر کیلئے بھی اٹھنا مشکل ہو تا ہے ، جبکہ سردی کے موسم میں رات لمبی ہو تی ہے اور اگر کوئی شخص عشا کے کچھ دیر بعد سوئے تو بھی صبح ہونے سے قبل ہی اسکی نید پوری ہو جاتی ہے لہذا تہجد کیلئے اٹھنا ایک مومن بندے پربھاری نہیں پڑتا ، یہی معنی ہے اس حدیث کا {جس کی سند پر اہل علم نے کلام کیا ہے }کہ سردی کاموسم ایک مومن کیلئے موسم بہار کی حیثیت رکھتا ہے اسلئے کہ اسمیں دن چھوٹا ہوتا ہے تو وہ روزہ رکھ لیتا ہے اور رات لمبی ہوتی ہے تو اسکا قیام کرلیتا ہے {مسند احمد شعب الایمان } چنانچہ عبد اللہ بن مسعود کے بارے میں آتا ہے کہ جب سردی کا موسم قریب آتا تو وہ فرماتے موسم سرما کے لئے خوش آمدید جسمیں تہجد کیلئے رات لمبی ہوتی ہے اور روزہ کیلئے دن چھوٹا ہوتا ہے ۔ حضرت حسن بصری رحمہ اللہ کا قول ہے کہ: سردی مومن کیلئے بہترین وقت ہے قیام کیلئے اسکی رات طویل ہوتی ہے اور روزہ رکھنے کیلئے اس میں دن چھوٹا ہوتا ہے {لطائف المعارف }

[۳] صبر کا اجر اللہ تعالی نے بہت بڑ ارکھا ہے (إِنَّمَا يُوَفَّى الصَّابِرُونَ أَجْرَهُمْ بِغَيْرِ حِسَابٍ) الزمر :10 "صبر کرنے والوں ہی کو ان کا پورا پوا بے شمار اجر دیا جاتا ہے "، بلکہ جنس انسانیت کوخسارے سے بچانے والے امور میں سے ایک چیز صبر بھی ہے ، اور علماء کہتے ہیں کہ جو صبر بندوں سے مطلوب ہے اسکی ایک اہم قسم اللہ تعالی کی فرمانبرداری پر بھی صبر ہے ، موسم سرما میں اس صبر کی بہت ضرورت پڑتی ہے خاصکر روزہ اور نماز جیسی عبادت کیلئے "چنانچہ سردی کے موسم میں پستر میں سے اٹھنا نفس پر بہت بھاری پڑتا ہے لیکن تہجد پڑھنے اور فجر کی نماز وقت اور جماعت سے اداکرنے کیلئے نرم وگداز اورگرم بستر کو چھوڑنا اور سردی برداشت کرنا ایک لازمی امر ہے ، اسی طرح جسم میں جب کھانے و پانی کی کمی ہوتی ہے تو سردی زیادہ محسوس ہوتی ہے لہذا روزہ رکھنے کی صورت میں بندے کو اس تکلیف پر بھی صبر کرنا پڑتا ہے اسی طرح سحری کی سنت پر عمل کرنے کیلئے بھی سردی سے سابقہ پڑتا ہے ، لہذا اگر مومن بندہ برضاءورغبت ان موقعوں پر صبر کرلیتا ہے تو وہ اجر عظیم کا مستحق ٹھہر تا ہے ۔

[4] وضو کو شریعت میں جو مقام حاصل ہے وہ کسی سےبھی پوشیدہ نہیں، ارشاد نبوی ہے :جس نے میری طرح وضو کیا اسکے تمام ماسبق گناہ معاف کردئے گئے {صحیح مسلم }نیز فرمایا:وضو آدھا ایمان ہے {صحیح مسلم }پھر اگر یہی وضو سردی کے موسم میں کیا جائے جبکہ پانی سرد ہو تو اسکا اجر مزید بڑ ھ جاتا ہے :ارشاد نبوی ہے :کیا میں تمھیں وہ کام نہ بتلاوں جن سے تمھارے گناہ مٹادئے جائیں اور جنت میں تمھارے درجے بلند ہو ں ؟صحابہ نے عرض کیا :یا رسول اللہ کیوں نہیں ؟ضرور بتلایئے ، آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فر ما یا {سردی کی}تکلیف و پریشانی کے باوجود اچھی طرح سے وضو کرنا ، اور مسجدوں کی طرف کثرت سے جانا اور ایک نماز کے بعد دوسری نماز کا انتظار کرنا ، یہی رباط ہے یہی رباط ہے {صحیح مسلم ، سنن الترمذی }

[5] ایک مومن جب اس دنیا کی ٹھنڈک کو محسوس کرتا ہے خاصکر ان دنوں یا علاقوں میں جہاں درجئہ حرارت صفر کے قریب ہوتا ہے تو اس وقت وہ زمہریر کی ٹھنڈک کو یاد کرتا ہے کیونکہ اسکا ایمان ہوتا ہے اس دنیا میں سردی وگرمی کا اصل سبب جہنم کے دوسانس ہیں {صحیح البخاری} لہذا ایسے موقعے پر مومن زمہریر کی ٹھنڈک کو یاد کرے اس سے اللہ تعالی کی پناہ چاہتا ہے اور جب بندہ جہنم سے اللہ تعالی کی پناہ چاہتا ہے تو جہنم خود درگاہ الہی میں شفارش کرتی ہے کہ اے اللہ تعالی تیرا فلاں بندہ مجھ سے تیری پناہ میں آنا چاہتا ہے لہذا تو اسے پناہ دےدے {مسند ابو یعلی }

فوائد :

1- سردی وگرمی اللہ تعالی کی مخلوق اور اسکے تابع فرمان ہیں اور مسلمان کیلئے دونوں میں خیر ہے لہذا کسی کو برا نہیں کہنا چاہئے.

2- سردی کے موسم میں آسان ہونے باوجود روزے کا اجر کامل ہے ۔

3- مسلمان کو چاہئے کہ موسم سرما کو روزہ و تہجد کیلئے غنیمت جانے ۔

   طباعة 
0 صوت
...
...

...

روابط ذات صلة

  ...  

المادة السابق
المواد المتشابهة المادة التالي
...
...

...

جديد المواد

  ...  

عاشوراء کا روزہ/حديث:35 - موسمی خلاصہ دروس
سال کا پہلا مہینہ/حدیث:34 - موسمی خلاصہ دروس
صحابہ کرام اور ہم/حدیث:32 - موسمی خلاصہ دروس
صحابہ کرام کی فضیلت/حدیث:31 - موسمی خلاصہ دروس
عظمت صحابہ/حدیث:05 - موسمی خلاصہ دروس
...
...

...

مكتب توعية الجاليات الغاط ?